ارضِ پاک نیوز نیٹ ورک

Arz-e-Pakistan News Network

Language:

Search

Nishat-1 حادثے سے بال بال بچ گیا.    Newly posted SSPs in Punjab police visit PSCA, PPIC3.    "  لڑکیاں صرف ماں کی کوکھ یا پھر قبر میں محفوظ ہیں" طالبہ نے خودکشی کر لی.    "میں ناگن، تو سپیرا " پوسٹ سوشل میڈیا پر وائرل.    "منی ہائسٹ "(Money Heist )کاآخری حصہ پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ریلیز کیا جائے گا.    NA-133 کا ضمنی انتخاب.    NA-133 ضمنی انتخاب.    NCA میں "دی سندھو پراجیکٹ اینگما آف روٹس " کے عنوان سے فن پاروں کی نمائش.    KIPS-CSS کی جانب سے CSSمیں کامیاب امیدواروں کے اعزاز میں عشائیہ.    NCA میں ٹریڈیشنل آرٹ کورسز ورکشاپ کی اختتامی تقریب.    NA-75 الیکشن کمیشن کی رپورٹ پر ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا ردعمل.    NA-133 ضمنی انتخاب : جمشید اقبال چیمہ کی اپیلوں پر الیکشن ٹربیونل کا فیصلہ جاری.   

کیا ہر احتجاج پر پورا ملک بند کر دیا جائے گا؟ سپریم کورٹ

ویب ڈیسک
25 May, 2022

25 مئی ، 2022

ویب ڈیسک
25 May, 2022

25 مئی ، 2022

کیا ہر احتجاج پر پورا ملک بند کر دیا جائے گا؟ سپریم کورٹ

post-title

سپریم کورٹ کے معزز جج جسٹس اعجاز الاحسن نے لانگ مارچ کے دوران راستوں کی بندش اور گرفتاریوں کیخلاف کیس کی سماعت کرتے ہوئے کہا ہے کہ کیا ہر احتجاج پر پورا ملک بند کر دیا جائے گا؟

کیس کی سماعت کے دوران جسٹس اعجاز الاحسن کا ریمارکس دیتے ہوئے کہنا تھا کہ تمام ہسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ، سکولز اور ٹرانسپورٹ بند ہے۔ معاشی لحاظ سے ملک نازک دوراہے اور دیوالیہ ہونے کے در پر ہے۔ کیا ہر احتجاج پر پورا ملک بند کر دیا جائے گا؟ تمام امتحانات ملتوی، سڑکیں اور کاروبار بند کر دیے گئے ہیں۔ بنیادی طور پر حکومت کاروبار زندگی ہی بند کرنا چاہ رہی ہے۔

عدالت عظمیٰ نے سیکرٹری داخلہ، چیف کمشنر اسلام آباد، آئی جی، ڈپٹی کمشنر اور ایڈووکیٹ جنرل کو آج 12 بجے طلب کر لیا۔ سپریم کورٹ نے چاروں صوبائی حکومتوں کو بھی نوٹس جاری کر دیے۔

اٹارنی جنرل نے کہا کہ سکولز کی بندش کے حوالے سے شاید آپ میڈیا رپورٹس کا حوالہ دے رہے ہیں۔ میڈیا کی ہر رپورٹ درست نہیں ہوتی۔ اس پر جسٹس مظاہر نقوی کا کہنا تھا کہ سکولز کی بندش اور امتحانات ملتوی ہونے کے سرکاری نوٹفکیشن جاری ہوئے ہیں۔

اٹارنی جنرل کا کہنا تھا کہ مجھے تفصیلات کا علم نہیں، معلومات لینے کا وقت دیں۔ اس پر جسٹس مظاہر نقوی نے ان کی سرزنش کرتے ہوئے کہا کہ اٹارنی جنرل صاحب کیا آپکو ملکی حالات کا علم نہیں؟ سپریم کورٹ کا آدھا عملہ راستے بند ہونے کی وجہ سے پہنچ نہیں سکا۔

معزز جج جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ ماضی میں بھی احتجاج کیلئے جگہ مختص کی گئی تھی۔ میڈیا کے مطابق تحریک انصاف نے احتجاج کی اجازت کیلئے درخواست دی تھی۔ اس پر اٹارنی جنرل نے کہا کہ میں انتظامیہ سے معلوم کرتا ہوں کہ درخواست پر کیا فیصلہ ہوا۔

عدالت کے روبرو اپنے بیان میں اٹارنی جنرل نے کہا کہ خونی مارچ کی دھمکی دی گئی ہے۔ بنیادی طور پر راستوں کی بندش کے خلاف ہوں۔ لیکن عوام کی جان ومال کے تحفظ کیلئے اقدامات ناگزیر ہوتے ہیں۔ راستوں کی بندش کو سیاق و سباق کے مطابق دیکھا جائے۔


 


APNN نیوز، APNN گروپ یا اس کی ادارتی پالیسی کا اس تحریر کے مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

APNN News, the APNN Group or its editorial policy does not necessarily agree with the contents of this article.


عوامی بحث (0) تبصرے دیکھنے کے لئے کلک کریں Public discussion (0) Click to view comments
28 / 5 / 2021
Monday
1 : 23 : 31 PM