ارضِ پاک نیوز نیٹ ورک

Arz-e-Pakistan News Network

Language:

Search

Nishat-1 حادثے سے بال بال بچ گیا.    Newly posted SSPs in Punjab police visit PSCA, PPIC3.    "  لڑکیاں صرف ماں کی کوکھ یا پھر قبر میں محفوظ ہیں" طالبہ نے خودکشی کر لی.    "میں ناگن، تو سپیرا " پوسٹ سوشل میڈیا پر وائرل.    "منی ہائسٹ "(Money Heist )کاآخری حصہ پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ریلیز کیا جائے گا.    NA-133 کا ضمنی انتخاب.    NA-133 ضمنی انتخاب.    NCA میں "دی سندھو پراجیکٹ اینگما آف روٹس " کے عنوان سے فن پاروں کی نمائش.    KIPS-CSS کی جانب سے CSSمیں کامیاب امیدواروں کے اعزاز میں عشائیہ.    NCA میں ٹریڈیشنل آرٹ کورسز ورکشاپ کی اختتامی تقریب.    NA-75 الیکشن کمیشن کی رپورٹ پر ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا ردعمل.    NA-133 ضمنی انتخاب : جمشید اقبال چیمہ کی اپیلوں پر الیکشن ٹربیونل کا فیصلہ جاری.   

شائقین کر کٹ کا شاندار استقبا ل ، ٹریفک و سکیورٹی انتظامات مکمل

ویب ڈیسک
29 Mar, 2022

29 مارچ ، 2022

ویب ڈیسک
29 Mar, 2022

29 مارچ ، 2022

شائقین کر کٹ کا شاندار استقبا ل ، ٹریفک و سکیورٹی انتظامات مکمل

post-title

 سٹی ٹریفک پولیس کا شائقین کرکٹ کو روائتی انداز میں خوش آمدید کہنے کا سلسلہ جاری۔ شائقین کرکٹ کو پھول،  بچوں میں گفٹ پیک تقسیم کئے جارہے ہیں، منتظر مہدی
 
کرکٹ پسندیدہ کھیل، بھرپور طریقے سے ویلکم کیا جارہا ہے، سٹی ٹریفک پولیس بھی پاکستان میں کرکٹ کی بحالی میں بھرپور کردار ادا کئے ہوئے ہے۔ سی ٹی او لاہوکا کہنا تھا کہ قذافی اسٹینڈیم کے گردونواح اور ڈائیورشن پوائنٹس پر ٹریفک آگاہی کیمپ بھی لگائے گئے ہیں۔وارڈنز جوش و جذبے سے فرائض سرانجام دیے رہے ہیں۔سی ٹی او لاہور کی شہریوں سے ڈائیورشن پوائنٹس پر موجود وارڈنز سے راہنمائی لینے کی ایپل۔
 
مذید برآں، پاکستان آسٹریلیا ون ڈے سیریز کیلئے ٹریفک کے انتظامات کو حتمی شکل دے دی گئی۔ گورنمنٹ بوائز کالج گلبرگ میں شائقین کرکٹ کی گاڑیاں پارک ہونگیں، منتظر مہدی ۔
شائقین کرکٹ لبرٹی پارکنگ ایریا میں بھی گاڑیاں پارک کر سکیں گے۔ اسٹیکرز والی گاڑیاں الحمراء کمپلیکس اور جیمنزیم کمپلیکس میں پارک ہونگیں۔ شائقین کرکٹ کی گاڑیاں براستہ سینٹر پوائنٹ پارکنگ ایریا میں داخل ہونگیں۔مجموعی طور پر 975 ٹریفک اہلکار روٹ ڈیوٹی سرانجام دیں گے۔

WhatsApp Image 2022-03-29 at 4.09.20 PM
 

 رانگ پارکنگ کے خاتمے کیلئے 20 فورک لفٹرز، 03 بریک ڈاؤنز بھی تعینات ہیں۔شہریوں اور شائقین کرکٹ کو ٹریفک کا کوئی مسئلہ نہیں ہوگا۔ شائقین کرکٹ کو روائتی انداز میں خوش آمدید کہا جائےگا۔ ہوٹل سے قذافی اسٹیڈیم اور اسٹیڈیم سے ہوٹل تک ٹیموں کو زیرو روٹ دیا جائے گا۔ ٹیموں کی موومنٹ کے دوران روڈز کو کچھ لمحوں کےلئے بند کیا جائے گا، سی ٹی او لاہور۔ موومنٹ گزرتے ہی تمام ڈائیورشن کو ٹریفک کےلئے کھول دیا جائےگا۔  راستہ ایپ،راستہ ایف ایم 88.6 کے ذریعے شہریوں کو ٹریفک کی بدلتی صورتحال سے آگاہ رکھا جائیگا، سی ٹی او لاہور
 دوسری طرف ،  پہلے میچ کے لئے سی سی پی او لاہور ایڈیشنل آئی جی فیاض احمد دیو کی قیادت میں لاہور پولیس کی طرف سے سکیورٹی کے سخت انتظامات عمل میں لائے گئے تھے۔کھلاڑیوں اور شائقین کرکٹ کو بھرپور سیکورٹی فراہم کرنے  کے لئےڈی آئی جی آپریشنز ڈاکٹر عابد خان اور  سی ٹی او لاہور منتظر مہدی کی زیر نگرانی سکیورٹی و ٹریفک کے موثر اور مربوط انتظامات عمل میں لائے گئے۔سی سی پی او لاہور نے پنجاب سیف سٹیز اتھارٹی کے کمانڈ اینڈ کنٹرول روم سے دونوں ٹیموں کی قیام گاہوں سے سٹیڈیم  روانگی،سٹیڈیم میں آنے والے شائقین کرکٹ کی چیکنگ کے عمل کا جائزہ بھی لیا۔انہوں نے تعینات پولیس افسران اور جوانوں کو انتہائی الرٹ ہو کرڈیوٹی کرنے،شہریوں سے خوش اخلاقی سے پیش آنے اور مشکوک سرگرمیوں پر کڑی نظر رکھنے کی ہدایت کی۔سی سی پی او لاہور نے کہا کہ ٹیموں کی سیکیورٹی و سیفٹی پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جا سکتا۔کھلاڑیوں، آفیشلز اور شائقین کرکٹ کو مکمل فول پروف سیکیورٹی فراہم کی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ میچز سکیورٹی کے لئے پہلے سے زیادہ بہتر حکمت عملی اپنائی گئی ہے۔فول پروف سکیورٹی انتظامات کے لئے ضلعی انتظامیہ سمیت تمام اداروں سے کوارڈینیشن میں ہیں۔

پاکستان اور آسٹریلیا کے مابین میچز کی سکیورٹی پر 08 ہزار سے زاہد پولیس افسران، جوان اور لیڈیزاہلکار تعینات کئے گئے۔کھلاڑیوں، آفیشلز،انٹرنیشنل میڈیا کی قیام گاہوں،سٹیڈیم اور روٹ پر 204 ڈولفن،107 پی آر یو، 45ایلیٹ ٹیمیں،سنائپرز بھی مامور تھے۔شہر بھر میں سرچ اینڈ سویپ آپرشنز بھی باقاعدگی سے جاری ہیں جبکہ شہریوں کی آگاہی،ٹریفک روانی کے لئے متبادل روٹس بارے ہدایات سمیت ٹریفک ایڈوائزری جاری کی گئی۔ٹیموں کے لئے دوران مومنٹ زیرو روٹ فراہم کیا گیا۔شائقین کو شناختی کارڈ، کورونا ویکسینیشن تصدیق، سکیورٹی و دیگر ایس او پیز کی چیکنگ کے بعد ہی سٹیڈیم میں داخلے کی اجازت دی گئی۔

WhatsApp Image 2022-03-29 at 5.59.50 PM
 


APNN نیوز، APNN گروپ یا اس کی ادارتی پالیسی کا اس تحریر کے مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

APNN News, the APNN Group or its editorial policy does not necessarily agree with the contents of this article.


عوامی بحث (0) تبصرے دیکھنے کے لئے کلک کریں Public discussion (0) Click to view comments
28 / 5 / 2021
Monday
1 : 23 : 31 PM