ارضِ پاک نیوز نیٹ ورک

Arz-e-Pakistan News Network

Language:

Search

Nishat-1 حادثے سے بال بال بچ گیا.    Newly posted SSPs in Punjab police visit PSCA, PPIC3.    "  لڑکیاں صرف ماں کی کوکھ یا پھر قبر میں محفوظ ہیں" طالبہ نے خودکشی کر لی.    "میں ناگن، تو سپیرا " پوسٹ سوشل میڈیا پر وائرل.    "منی ہائسٹ "(Money Heist )کاآخری حصہ پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ریلیز کیا جائے گا.    NA-133 کا ضمنی انتخاب.    NA-133 ضمنی انتخاب.    NCA میں "دی سندھو پراجیکٹ اینگما آف روٹس " کے عنوان سے فن پاروں کی نمائش.    KIPS-CSS کی جانب سے CSSمیں کامیاب امیدواروں کے اعزاز میں عشائیہ.    NCA میں ٹریڈیشنل آرٹ کورسز ورکشاپ کی اختتامی تقریب.    NA-75 الیکشن کمیشن کی رپورٹ پر ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا ردعمل.   

پروین رحمان قتل کیس میں پولیس کی سنگین اور مجرمانہ غفلت سامنے آگئی

ویب ڈیسک
21 Nov, 2022

21 نومبر ، 2022

ویب ڈیسک
21 Nov, 2022

21 نومبر ، 2022

پروین رحمان قتل کیس میں پولیس کی سنگین اور مجرمانہ غفلت سامنے آگئی

post-title

کراچی: اورنگی پائلٹ پراجیکٹ کی ڈائریکٹر پروین رحمان قتل کیس میں پولیس کی سنگین اور مجرمانہ غفلتیں سامنے آگئیں۔

پروین رحمان کے قتل کے24گھنٹوں کے اندر ایک ملزم کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا گیا اور اس وقت پولیس حکام کی جانب سے اس مقابلے کا کریڈٹ بھی لیا گیا جب کہ ہلاک ملزم کا تعلق مبینہ طور پر کالعدم تنظیم سےبتایا گیا،  اس ملزم کو پروین رحمان کا قاتل ظاہر کیا گیا اور خول بھی میچ کروائےگئے۔

جاوید عالم اوڈھو اس وقت ڈی آئی جی ویسٹ اور آصف اعجاز شیخ ایس ایس پی ویسٹ تھے اور ان دونوں افسران کو چند ایس ایچ اوز کی جانب سے یہ اطلاعات دی گئیں۔

ذرائع کے مطابق ملزم مبینہ طور پر نہ ہی ہلاک ہوا نہ اس کا تعلق کیس میں سامنے آیا،  چند سال بعدویسٹ پولیس نے ہی رحیم سواتی سمیت دیگر ملزمان گرفتار کیے، ان گرفتار ملزمان کے خلاف شواہد بھی جمع کیے گئے تھےتاہم براہ راست ان ملزمان کے کیس میں کوئی شواہد نہ مل سکے۔

ذرائع نے بتایا کہ پہلے ہلاک ملزم کا تعلق کالعدم تنظیم بعد میں سیاسی جماعت سے بتایاگیا، شواہد ضائع کیےجانے پرٹھوس تحقیقات سامنے نہیں آسکیں۔

ذرائع کے مطابق پروین رحمان قتل کیس کی تحقیقات کے لیے عدالتی حکم پر کئی جے آئی ٹیز بنیں، قتل کی ممکنہ وجوہات میں لینڈ گریبنگ کاذکر جےآئی ٹی میں کیا گیا جب کہ کیس خراب کرنے میں مبینہ طور پر پولیس کے چند افسران ہی ملوث تھے۔

واضح رہےکہ اورنگی پائلٹ پراجیکٹ کی سربراہ پروین رحمان کو 2013 میں قتل کیا گیا تھا اور ان کے کیس میں نامزد ملزمان کو انسداد دہشتگردی کی عدالت نے دسمبر 2021 میں 2،2 بار عمر قید کی سزا سنائی تھی۔


APNN نیوز، APNN گروپ یا اس کی ادارتی پالیسی کا اس تحریر کے مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

APNN News, the APNN Group or its editorial policy does not necessarily agree with the contents of this article.


عوامی بحث (0) تبصرے دیکھنے کے لئے کلک کریں Public discussion (0) Click to view comments
28 / 5 / 2021
Monday
1 : 23 : 31 PM