ارضِ پاک نیوز نیٹ ورک

Arz-e-Pakistan News Network

Language:

Search

Newly posted SSPs in Punjab police visit PSCA, PPIC3.    "  لڑکیاں صرف ماں کی کوکھ یا پھر قبر میں محفوظ ہیں" طالبہ نے خودکشی کر لی.    "میں ناگن، تو سپیرا " پوسٹ سوشل میڈیا پر وائرل.    "منی ہائسٹ "(Money Heist )کاآخری حصہ پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ریلیز کیا جائے گا.    NA-133 کا ضمنی انتخاب.    NA-133 ضمنی انتخاب.    NCA میں "دی سندھو پراجیکٹ اینگما آف روٹس " کے عنوان سے فن پاروں کی نمائش.    KIPS-CSS کی جانب سے CSSمیں کامیاب امیدواروں کے اعزاز میں عشائیہ.    NCA میں ٹریڈیشنل آرٹ کورسز ورکشاپ کی اختتامی تقریب.    NA-75 الیکشن کمیشن کی رپورٹ پر ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا ردعمل.    NA-133 ضمنی انتخاب : جمشید اقبال چیمہ کی اپیلوں پر الیکشن ٹربیونل کا فیصلہ جاری.    UAE گولڈن جوبلی: گلوبل ولیج تصویری مقابلہ درہم 50,000 تک جیتنے کا موقع.   

home-add

کیا آٹے کی قیمت مزید بڑھے گی؟

ویب ڈیسک
13 May, 2022

13 مئی ، 2022

ویب ڈیسک
13 May, 2022

13 مئی ، 2022

کیا آٹے کی قیمت مزید بڑھے گی؟

post-title

ملک میں اس وقت عام بازاروں میں آٹے کی قیمت 70 روپے فی کلو، فائن آٹا 75 سے 80 روپے فی کلو اور چھوٹی چکیوں پر بکنے والا آٹا 80 روپے فی کلو میں دستیاب ہے۔

 موجودہ حکومت کی جانب سے عوام کو سستا آٹا فراہم کرنے کا اعلان کیا گیا ہے تاہم یہ سہولت یوٹیلٹی سٹورز پر دستیاب ہو گی۔

 پاکستان میںگندم خوراک کا اہم جُزو ہے اور ہر پاکستانی  124 کلوگرام گندم سالانہ کھا لیتا ہے

اجناس کے ماہر کا کہنا تھا کہ اس وقت 52 سے 53 روپے فی کلو کے حساب سے گندم فلور ملز کو دی جا رہی ہے۔

فلور ملز ایسوسی ایشن کے سابق چیئرمین عبد الرؤف مختارکا کہنا ہے کہ اس وقت مقامی گندم 2300 سے 2350 روپے فی من کے حساب سے دستیاب ہے۔

انہوں نی کہا کہ اس سال بھی گندم مہنگی ہوئی ہے جس کا اثر آٹے کی قیمت پر پڑ رہا ہے۔ جب درآمدی گندم زیادہ مہنگے دام ملک میں پہنچے گی تو اس پر حکومت سبسڈی تو دے گی تاہم پھر بھی قیمت بڑھنے کا امکان ہے۔

ماہر اجناس شمس الاسلام نے بتایا کہ درآمدی گندم کی وجہ سے ملک میں آٹے کی قیمت بڑھنے کا بہت زیادہ امکان موجود ہے۔

اُنھوں نے کہا اگرچہ حکومت یہ گندم درآمد کرے گی اور اسے رعایتی نرخوں پر فلور ملز کو دے گی تاہم درآمدی گندم سے پہلے مقامی گندم کی ذخیرہ اندوزی شروع ہو جاتی ہے جو پہلے بھی دیکھا گیا اور اس کی قیمت میں اضافے کا سبب بنتی ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ ’حکومت 1950 روپے فی من کے حساب سے فلور ملز کو گندم دے رہی ہے جس کی فی کلو لاگت 49 روپے تک آتی ہے اور اس میں فلور ملز کے اخراجات اور ٹرانسپورٹیشن بھی شامل کر دی جائے تو آٹے کی قیمت زیادہ سے زیادہ 55 روپے فی کلو ہونی چاہیے تاہم پاکستان میں ایسا نہیں ہو رہا اور آٹے کی قیمت اس سے کہیں زیادہ ہے۔‘

 


APNN نیوز، APNN گروپ یا اس کی ادارتی پالیسی کا اس تحریر کے مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

APNN News, the APNN Group or its editorial policy does not necessarily agree with the contents of this article.


عوامی بحث (0) تبصرے دیکھنے کے لئے کلک کریں Public discussion (0) Click to view comments
28 / 5 / 2021
Monday
1 : 23 : 31 PM