ارضِ پاک نیوز نیٹ ورک

Arz-e-Pakistan News Network

Language:

Search

Newly posted SSPs in Punjab police visit PSCA, PPIC3.    "  لڑکیاں صرف ماں کی کوکھ یا پھر قبر میں محفوظ ہیں" طالبہ نے خودکشی کر لی.    "میں ناگن، تو سپیرا " پوسٹ سوشل میڈیا پر وائرل.    "منی ہائسٹ "(Money Heist )کاآخری حصہ پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ریلیز کیا جائے گا.    NA-133 کا ضمنی انتخاب.    NA-133 ضمنی انتخاب.    NCA میں "دی سندھو پراجیکٹ اینگما آف روٹس " کے عنوان سے فن پاروں کی نمائش.    KIPS-CSS کی جانب سے CSSمیں کامیاب امیدواروں کے اعزاز میں عشائیہ.    NCA میں ٹریڈیشنل آرٹ کورسز ورکشاپ کی اختتامی تقریب.    NA-75 الیکشن کمیشن کی رپورٹ پر ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا ردعمل.    NA-133 ضمنی انتخاب : جمشید اقبال چیمہ کی اپیلوں پر الیکشن ٹربیونل کا فیصلہ جاری.    UAE گولڈن جوبلی: گلوبل ولیج تصویری مقابلہ درہم 50,000 تک جیتنے کا موقع.   

home-add

لاہور آوارگی

نعیم گھمن
28 Mar, 2022

28 مارچ ، 2022

نعیم گھمن
28 Mar, 2022

28 مارچ ، 2022

لاہور آوارگی

post-title

فقیر لاہور ۔درویش شہر بے مثال شاہ حسین لاہوری کے سالانہ عرس میں شرکت ۔لاہور میں میلہ چراغاں بہار کا استقبال کرتا ہے ۔اس کے ساتھ ہی بسنت بھی منائی جاتی تھی جو اب قصہ ماضی بن چکی ۔میلہ چراغاں کا جوبن وہ نہیں رہا جو گزشتہ دہائیوں میں تھا مگر اس کی بچی کچھی  رعنائیاں انسان کو آج بھی اپنی گرفت میں لے لیتی ہیں ۔شاہ حسن لاہور نے ساری زندگی ظاہری شریعت کے پروا نہیں کی  ۔شاہ حسین اپنی  باطنی ہشاشت کی سوغات کو لاہور کے کوچے کوچے میں تقسیم کرتے رہے ۔ان کا مذہب انسان سے پیار تھا اور خود اپنے پیار کو یوں دوائم دیا کہ مادھو لال حسین کہلائے ۔راوی کو اپنی جاگیر سمجھتے تھے ۔مغلیہ عہد میں شہر لاہور کے گلی کوچوں میں پیار کی صدائیں بلند کرتے تھے ۔دلی دروازے کے مدرسے کے اس سبق کو چھوڑ کر  اٹھا ہوا یہ طالب علم باطنی دنیا کا مسافر بنا ۔اس نے اپنی پنجابی کافیوں  کے ذریعے اپنی سر مستی کا اظہار کیا ہے ۔
کہے حسین فقیر سائیں دا
میں نہیں سب توں
ان کی کافیاں زندگی کی لذتوں سے بھرپور ہیں ۔
مائی نی میں کینوں اکھاں
درد وچھوڑے دا حال
شاہ حسین فقیر تھا ۔مجذوب تھا ۔شہر لاہور کا عاشق تھا ۔مغل بادشاہوں سے دور رہ کر اپنی کٹیا آباد رکھتا تھا ۔ہندو جوان مادھو سے عشق کی کہانی بڑھائی پھر وجودی رنگ میں یوں رنگے کہ ہر سو ہو ہی ہو دکھائی دینے لگا ۔دلا بھٹی بھی اس فقیر کی خانقاہ میں پناہ لیتا تھا ۔شاہ جہاں ملنے کے لیے بے تاب رہتا ۔حسو تلی کو حساب کتاب کی دنیا سے نکال کر معرفت  کی راہوں کا مسافر بنا دیا ۔مجھے یوں لگتا ہے کہ آج بھی شاہ حسین اور اس کے ملنگوں کے ڈھول اور پاوں میں پہنے گھنگروں کی آوازیں شہر لاہور کے گلی کوچوں میں رنگ بکھیر رہی ہیں ۔انسانوں سے پیار کرنے والا شاہ حسین سب کا محبوب تھا ۔ہندو ۔سکھ ۔عیسائی اور مسلمان سب ہی میلہ چراغاں کو اپنا سمجھتے تھے ۔رند مزاج شاہ حسین کی خیر ہو ۔اس کی درگاہ پر رقص کرنے والے ملنگوں کو سلام پہنچے ۔اس کی دہلیز پر ہونے والی چراغاں کا دھواں پورے خطے کو اپنی الفت و محبت کی چادر میں سمو لے  اور محبت کا چلن عام ہو ۔ہائے کاش انسان جیت جائے ۔پیار کو دوام ملے ۔نفرتوں کا کاروبار ختم ہو ۔اس دھرتی کی خوشبو سے پھر ہر کوئی تازگی محسوس کرے ۔شہر لاہور کے میلے ٹھیلے آباد رہیں ۔ہر سو امن کے دیپ جلیں ۔
جناب ریحان خان ۔ مرزا عثمان بیک  اور سچی شہر یار کے ساتھ کل شام شاہ حسین کی نگری میں رقص ۔ڈھول ۔دھمال ۔درویشی دھواں اور شاہ حسین کے نعروں کو سنتے رہے ۔ہائے یہ شام کس قدر حسیں تھی جس میں قال  کی بجائے حال غالب تھا ۔سرمستی اور بے خودی کا عجب رنگ تھا جس کو لفظوں کا پیرہن کیسے پہناوں ۔
 


APNN نیوز، APNN گروپ یا اس کی ادارتی پالیسی کا اس تحریر کے مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

APNN News, the APNN Group or its editorial policy does not necessarily agree with the contents of this article.


عوامی بحث (0) تبصرے دیکھنے کے لئے کلک کریں Public discussion (0) Click to view comments
28 / 5 / 2021
Monday
1 : 23 : 31 PM