ارضِ پاک نیوز نیٹ ورک

Arz-e-Pakistan News Network

Language:

Search

Newly posted SSPs in Punjab police visit PSCA, PPIC3.    "  لڑکیاں صرف ماں کی کوکھ یا پھر قبر میں محفوظ ہیں" طالبہ نے خودکشی کر لی.    "میں ناگن، تو سپیرا " پوسٹ سوشل میڈیا پر وائرل.    "منی ہائسٹ "(Money Heist )کاآخری حصہ پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ریلیز کیا جائے گا.    NA-133 کا ضمنی انتخاب.    NA-133 ضمنی انتخاب.    NCA میں "دی سندھو پراجیکٹ اینگما آف روٹس " کے عنوان سے فن پاروں کی نمائش.    KIPS-CSS کی جانب سے CSSمیں کامیاب امیدواروں کے اعزاز میں عشائیہ.    NCA میں ٹریڈیشنل آرٹ کورسز ورکشاپ کی اختتامی تقریب.    NA-75 الیکشن کمیشن کی رپورٹ پر ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا ردعمل.    NA-133 ضمنی انتخاب : جمشید اقبال چیمہ کی اپیلوں پر الیکشن ٹربیونل کا فیصلہ جاری.    UAE گولڈن جوبلی: گلوبل ولیج تصویری مقابلہ درہم 50,000 تک جیتنے کا موقع.   

home-add

پہلی بار ہماری کہکشاں میں بلیک ہول دریافت، تصویر جاری

ویب ڈیسک
12 May, 2022

12 مئی ، 2022

ویب ڈیسک
12 May, 2022

12 مئی ، 2022

پہلی بار ہماری کہکشاں میں بلیک ہول دریافت، تصویر جاری

post-title

سائنسدان پہلی بار ہماری کہکشاں میں موجود بلیک ہول کی تصویر لینے میں کامیاب ہوگئے ہیں۔

عالمی ریسرچ ٹیم ایونٹ ہورائزن ٹیلی اسکوپ (ای ایچ ٹی) کی ٹیم نے اس تصویر کو جاری کرتے ہوئے بتایا کہ ہماری کہکشاں کے وسط میں ایک بہت بڑا بلیک ہول موجود ہے۔

اس سے قبل یہ خیال تو کیا جاتا تھا کہ نظام شمسی جس کہکشاں میں موجود ہے ، اس کے وسط میں ایک بلیک موجود ہے مگر اب اس کی تصدیق ہوئی ہے۔
 
اس ٹیم کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا کہ سائنسدانوں نے ماضی میں ستاروں کو کسی نادیدہ چیز کے گرد چکر لگاتے ہوئے دیکھا تھا جو ان کے خیال میں بلیک ہول تھا جسے Sagittarius A کا نام دیا گیا تھا۔

بیان کے مطابق اس تصویر سے پہلی بار اس بلیک ہول کا وجود ثابت ہوتا ہے۔

بیان میں مزید بتایا گیا کہ اگر چہ سائنسدان بلیک ہول کو خود تو نہیں دیکھ سکے کیونکہ وہ مکمل تاریکی میں ہے ، مگر اس کے ارگرد جگمگاتی گیس سے یہ واضح ہوتا ہے ۔

تصویر میں ایک تاریک سایہ دکھایا گیا ہے جس کے ارگرد جگمگاتے رنگ جیسے اسٹرکچر موجود ہے ۔

اس تصویر میں نظر آنے والی روشنی سے بلیک ہول کی طاقتور کشش ثقل کا عندیہ ملتا ہے جو کہ ہمارے سورج سے 40 لاکھ گنا زیادہ ہے۔

ای ایچ ٹی کے پراجیکٹ سائنٹسٹ جوفری بوور نے کہا کہ ہم یہ دیکھ کر دنگ رہ گئے کہ رنگ کے حجم سے کس طرح آئن اسٹائن کے نظریہ اضافیت کی تصدیق ہوتی ہے ، اس بے نظیر مشاہدے سے ہمیں یہ سمجھنے میں زیادہ مدد مل سکے گی کہ ہماری کہکشاں کے وسط میں کیا کچھ ہورہا ہے اور یہ بڑے بلیک ہول کس طرح اپنے ارگرد سے تعلق قائم کرتے ہیں۔

بیان کے مطابق چونکہ یہ بلیک ہول زمین سے 27 ہزار نوری سال کے فاصلے پر واقع ہے ، اسی وجہ سے تصویر میں یہ بہت چھوٹا محسوس ہوتا ہے۔

اس سے قبل ای ایچ ٹی کی ٹیم نے ہی 2019 میں انسانی تاریخ میں بلیک ہول کی پہلی تصویر بھی جاری کی تھی جو ایک کہکشاں ایم 87 میں واقع ہے۔

یہ دونوں بلیک ہولز دیکھنے میں حیران کن حد تک ایک جیسے نظر آتے ہیں ، مگر ہماری کہکشاں میں موجود بلیک ہول ایم 87 کے مقابلے میں ہزاروں گنا چھوٹا ہے۔

محققین کے مطابق ہم نے 2 مختلف اقسام کی کہکشاؤں میں 2 بالکل مختلف حجم والے بلیک ہولز کو دیکھا، مگر دونوں حیران کن حد تک ایک جیسے نظر آتے ہیں۔
بلیک ہول ہے کیا؟

خیال رہے کہ کائنات کے اسراروں میں سے ایک اسرار بلیک ہول بھی ہے جسے جاننے اور سمجھنے کے لیے سائنسدان تگ و دو میں لگے رہتے ہیں۔

بلیک ہول کائنات کا وہ اسرار ہے جسے کئی نام دیے گئے ہیں، کبھی اسے ایک کائنات سے دوسری کائنات میں جانے کا راستہ کہا جاتا ہے تو کبھی موت کا گڑھا۔

کوئی بھی ستارہ بلیک ہول اس وقت بنتا ہے جب اس کے تمام مادے کو چھوٹی جگہ میں قید کردیا جائے۔ اگر ہم اپنے سورج کو ایک ٹینس بال جتنی جگہ میں مقید کردیں تو یہ بلیک ہول میں تبدیل ہوجائے گا۔

 


APNN نیوز، APNN گروپ یا اس کی ادارتی پالیسی کا اس تحریر کے مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

APNN News, the APNN Group or its editorial policy does not necessarily agree with the contents of this article.


عوامی بحث (0) تبصرے دیکھنے کے لئے کلک کریں Public discussion (0) Click to view comments
28 / 5 / 2021
Monday
1 : 23 : 31 PM