ارضِ پاک نیوز نیٹ ورک

Arz-e-Pakistan News Network

Language:

Search

Nishat-1 حادثے سے بال بال بچ گیا.    Newly posted SSPs in Punjab police visit PSCA, PPIC3.    "  لڑکیاں صرف ماں کی کوکھ یا پھر قبر میں محفوظ ہیں" طالبہ نے خودکشی کر لی.    "میں ناگن، تو سپیرا " پوسٹ سوشل میڈیا پر وائرل.    "منی ہائسٹ "(Money Heist )کاآخری حصہ پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ریلیز کیا جائے گا.    NA-133 کا ضمنی انتخاب.    NA-133 ضمنی انتخاب.    NCA میں "دی سندھو پراجیکٹ اینگما آف روٹس " کے عنوان سے فن پاروں کی نمائش.    KIPS-CSS کی جانب سے CSSمیں کامیاب امیدواروں کے اعزاز میں عشائیہ.    NCA میں ٹریڈیشنل آرٹ کورسز ورکشاپ کی اختتامی تقریب.    NA-75 الیکشن کمیشن کی رپورٹ پر ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا ردعمل.   

مسلح افواج کے سربراہ کی تعیناتی چیف جسٹس کی طرح ہونی چاہیے: عمران خان

ویب ڈیسک
18 Nov, 2022

18 نومبر ، 2022

ویب ڈیسک
18 Nov, 2022

18 نومبر ، 2022

مسلح افواج کے سربراہ کی تعیناتی چیف جسٹس کی طرح ہونی چاہیے: عمران خان

post-title

لاہور: ( ویب ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف کے چیئر مین اور سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ عام انتخابات کے بعد سیاسی جماعتوں سے اتحاد ممکن ہے، مسلح افواج کے سربراہ کی تعیناتی چیف جسٹس سپریم کورٹ کی طرح ہونی چاہیے، آرمی چیف سے میری لاہور میں کوئی ملاقات نہیں ہوئی۔انکے مقدمے کے اندراج میں سب سے بڑی رکاوٹ سنئیر پولیس افسران بشمول سابق ائی جی پنجاب پولیس تھے۔

سینئر صحافیوں کے ساتھ غیر رسمی گفتگو کے دوران سابق وزیراعظم نے کہا کہ موجودہ حکومت آرمی ایکٹ میں ترمیم اپنے فائدے کیلئے کررہی ہے، آرمی ایکٹ میں ترمیم کرکے مسلح افواج کو پنجاب پولیس کے برابر لانا چاہتے ہیں، آرمی ایکٹ میں ہونے والی مجوزہ ترمیم اعلیٰ عدلیہ میں چیلنج ہو جائے گی، نوازشریف وہ آرمی چیف لگانا چاہتا ہے جو مجھے نااہل کرے اور نوازشرہف کے کیسز ختم کریں، پھر اسے اقتدار میں لائیں۔

پی ٹی آئی چیئر مین کا کہنا تھا کہ مسلح افواج کے سربراہ کی تعیناتی چیف جسٹس سپریم کورٹ کی طرح ہونی چاہیے، صدر عارف علوی کی آرمی چیف سے ملاقات ہوئی ہے،  ان کی بیک ڈور رابطوں کے سلسلے میں آرمی چیف سمیت کسی کے ساتھ لاہور میں ملاقات نہیں ہوئی، صدر علوی کے ساتھ ملاقات ضرور ہوئی ہے مگر اس ملاقات کا واحد ایجنڈا جلد شفاف انتخابات تھا۔

اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ میرے معالجین کل میرا معائنہ کر کے اپنی رائے سے آگاہ کریں گے، راوالپنڈی سے لانگ مارچ کی قیادت خود کروں گا، ارشد شریف کے معاملے پر ان کا کیا گیا ظلم سب کے سامنے ہے، توشہ خانہ کیس میں انہوں نے مجھے خود عدالت میں جانے کاموقع دیاہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ وزیرآباد مرکزی ملزم کو 14 دن بعد عدالت پیش کیا گیا، خدشہ ہے ان 14 روز میں شواہد ضائع نا ہوجائیں، ق لیگ ہمارے اتحادی ہیں، پرویز الہی کے ساتھ بہترین اتحاد چل رہا ہے، میں نے انتخابات میں الیکٹرانک ووٹنگ مشین (ای وی ایم) مشین سے دھاندلی رکوانے کی بھر پور کوشش کی ، ای وی ایم کے معاملے پر نواز زرداری الیکشن کمیشن اور ہینڈلز ایک پیج پر تھے، مکمل اختیارات ملیں گے تو وزیراعظم بنوں گا، یہ نہیں ہوسکتا کہ اختیارات کسی کے پاس ہوں اور ذمہ داری کسی اور کے پاس ہو، کسی سے کوئی مذاکرات نہیں ہورہے۔

مقدمے کے اندراج میں سب سے بڑی رکاوٹ سینئر پولیس افسران ہیں

عمران خان نے کہا کہ انکے مقدمے کے اندراج میں سب سے بڑی رکاوٹ سنئیر پولیس افسران بشمول سابق ائی جی پنجاب پولیس تھے۔

عمران خان نے کہا کہ توشہ خانہ سے زرداری اور نواز شریف نے غیر قانونی طور پر گاڑیاں لیں، گھڑی کا تمام ریکارڈ توشہ خانہ میں موجود ہے ان لوگوں نے مجھے خود عدالت میں جانے کے موقع دیا ہے۔ میں اس معاملے کو لیکر برطانیہ اور امریکی عدالتوں سے نجی ٹی وی اور امپورٹڈ حکومت کے خلاف رجوع کروں گا۔

 انہوں نے کہا کہ آئندہ بااختیار حکومت لوں گا یہ نہیں ہو سکتا ذمہ داری کسی ہے پاس ہو اور اختیار دوسرے کے پاس۔ عام انتخابات کے بعد سیاسی جماعتوں سے اتحاد ممکن ہے اس وقت ان کی جماعت اور قاف لیگ کے درمیان بہترین اتحاد موجود ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ انکے دور حکومت میں نیب کو کوئی اور کنٹرول کر رہا تھا، پاکستان میں پی۔ ڈی۔ ایم الیکشن کمیشن اور طاقتور ادارے انتخابات میں ہونے والے دھاندلی روکنے کیلئے ای۔ وی۔ ایم مشین کے استعمال کے حق میں نہیں تھے۔ موجودہ حکومت ملکی معشیت اور ملک دو ون کو سنبھالنے کی صلاحیت نہیں رکھتی۔ ارشد شریف کے معاملے پر وہ ظلم کیا گیا جس کی مثال ماضی میں نہیں ملتی۔

موجودہ حکومت ملکی معیشت کی تباہی کی ذمہ دار ہے

چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان نے موجودہ حکومت کو معیشت کی تباہی کا ذمے دار قرار دے دیا۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر سابق وزیراعظم عمران خان نے پاکستان کے دیوالیے ہونے کے خطرے سے متعلق اعداد و شمار شیئر کئے اور موجودہ حکومت پر اس کا الزام لگایا۔

چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ 6 ماہ قبل پیشگوئی کردی تھی کہ تبدیلئ سرکار کی سازش ہماری قرض واپسی کی صلاحیت نیست ونابود کردے گی، پہلے ہی بتا دیا تھا کہ تبدیلی سرکار ہماری معیشت کو تباہی کے گڑھے میں اتار دے گی۔

عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان پر کم و بیش 3 دہائیوں تک راج کرنے والے دو مجرم خاندان معیشت کی تعمیر میں کبھی سنجیدہ تھے اور نہ ہی ان میں اس کی صلاحیت تھی۔

 


APNN نیوز، APNN گروپ یا اس کی ادارتی پالیسی کا اس تحریر کے مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

APNN News, the APNN Group or its editorial policy does not necessarily agree with the contents of this article.


عوامی بحث (0) تبصرے دیکھنے کے لئے کلک کریں Public discussion (0) Click to view comments
28 / 5 / 2021
Monday
1 : 23 : 31 PM